سریاب بس ٹرمینل کی زمین میری ملکیت ہے، نواب ثناء اللہ خان زہری

0 377

Get real time updates directly on you device, subscribe now.

کوئٹہ: پاکستان پیپلز پارٹی کے رہنماء سابق وزیر اعلیٰ بلوچستان نواب ثناء اللہ خان زہری نے کمسن محراب پندرانی زہری کے بہیمانہ تشدد اور قتل کی مذمت کرتے ہوئے کہا ہے کہ سریاب روڈ پر قائم بس ٹرمینل کی اراضی میری ذاتی ملکیت اور رجسٹری بھی میرے اپنے نام پر ہے اور میری اپنی اراضی پر میرے قبیلے کے بے گناہ کمسن محراب پندرانی زہری سمیت سینکڑوں نوجوانوں کو بے دردی سے قتل کیا جارہا ہے جو ناقابل برداشت عمل ہے حکومت مذکورہ بس ٹرمینل خالی کروائے بصورت دیگر بس ٹرمینل کو واگزار کرنے میں اگر ہم نے پہل کی تو کسی بھی خون خرابے کی ذمہ داری مذکورہ ٹرانسپورٹراور انکے بیٹوں پر عائد ہوگی اپنے ایک جاری کردہ بیان میں سابق وزیر اعلیٰ بلوچستان چیف آف جھالاوان نواب ثناء اللہ خان زہری نے کہا کہ سرکاری ریکارڈ کے مطابق مذکورہ بس ٹرمینل کی اراضی میری ملکیت ہے عرصہ دراز سے سریاب روڈ پر بس ٹرمینل کے نام پر میری ذاتی ملکیت پر قبضہ کیا گیا ہے عاصم کرد گیلو اور صوبے کی دیگر اہم سیاسی و قبائلی شخصیات گواہ ہیں کیونکہ مذکورہ بس ٹرمینل میری اراضی پر تعمیر کی گئی ہے اور سرکاری رجسٹری میں آج بھی مذکورہ اراضی میرے نام پر ہے وزیر اعلی بلوچستان اور آئی جی پولیس سمیت کسی بھی پلیٹ فارم پر میرا وکیل مذکورہ اراضی کی سرکاری دستاویزات پیش کرنے کیلئے تیار ہے جسے کسی بھی وقت طلب کیا جاسکتا ہے انھوں نے کہا کہ میں نے الیکشن کمیشن اور ایف بی آر ریکارڈ میں بھی مذکورہ اراضی کی ملکیت ظاہر کی ہے جو میرے ایسڈ میں شامل ہے جنھیں کسی بھی وقت کوئی بھی سرکاری ادارہ چیک کرسکتا ہے انکے بیٹے میرے اپنے قبیلے کے غریب افراد پر بہیمانہ تشدد اور انھیں بے دردی سے قتل کرتے ہیں جس کی واضح مثال شہید محراب پندرانی زہری کا قتل ہے جو آشکار ہوا ہے اور مجھ سمیت کوئی بھی ذی الشعور انسانی اپنی ذاتی ملکیت پر نہ کسی کو غیر قانونی کام کرنے کی اجازت دے گی اور نہ ہی کسی بے گناہ کو قتل کرنے کی اجازت دیگی انھوں نے کہا کہ مذکورہ اراضی پر نا صرف قتل و غارت گری کا سلسلہ شروع کیا گیا ہے بلکہ منشیات سمیت دیگر غیر قانونی کام ہورہے ہیں جس کی جتنے مذمت کی جائے کم ہے نواب ثناء اللہ زہری نے کہا کہ حاجی فیروز لہڑی اور ان کے بیٹوں کی جانب سے ایک جانب قبضہ اور دوسری جانب پولیس کے خلاف جرگہ بلاکر حکومت اور اداروں کو بلیک میل کرنا افسوسناک ہے اور کسی صورت قبضہ مافیا کے بلیک میلنگ میں نہیں آئیں گے

50% LikesVS
50% Dislikes
Leave A Reply

Your email address will not be published.