افغانستان میں گیارہ لاکھ کمسن بچی غذا کی شدید کمی کا شکار، اقوام متحدہ

0 108

Get real time updates directly on you device, subscribe now.

برسلز:اقوام متحدہ نے کہا ہے کہ رواں سال افغانستان میں تقریبا11لاکھ بچے غذا ئی قلت کا شکار ہو سکتے ہیں۔امریکی نشریاتی ادارے کے مطابق افغانستان میں یونیسیف کے غذائیت کے پروگرام کی سربراہ میلینی گیلون نے کہا ہے کہ موجودہ حالات کو دیکھتے ہوئے اندازہ ہے کہ افغانستان میں 2018 کے مقابلے میں شدید کم خوراکی کے شکارمیں5سال سے کم عمر بچوں کی تعداد دوگنی ہوسکتی ہے جبکہ گزشتہ سال یہ تعداد 10 لاکھ کے قریب تھی ۔اقوام متحدہ اوردیگرامدادی ایجنسیاں قحط کے شکار ملک میں ہنگامی بنیادوں پر امداد دے رہی ہیں تاکہ بھوکے عوام کو مناسب خوراک مل سکے۔انہوں نے بتایا کہ امدادی کوششوں کے باوجود غربت اور بھوک بڑھتی جا رہی ہے دوسری طرف یوکرین کی جنگ کی وجہ سے عالمی سطح پرخوراک کی قیمتیں بھی بڑھ رہی ہیں اسی غربت کی وجہ سے حاملہ خواتین کو مناسب غذا نہیں مل پاتی اور بچے پیدا ہونے سے قبل ہی کم خوراکی کی وجہ سے مختلف بیماریوں کا شکار ہو جاتے ہیں ۔انہوں نے کہا کہ اس شدید حالت میں بچوں کا وزن کم ہوجاتا ہے،ان کی قوت مدافعت اتنی کمزور پڑجاتی ہے جس سے وہ موت کے منہ میں چلے جاتے ہیں۔انہوں نے کہا کہ یونیسیف نے پورے ملک میں ایک ہزار کے قریب صحت کے مراکز قائم کیے ہیں، جہاں ایسے بچوں کا علاج اور دیکھ بھال کی جا رہی ہے تاہم ان کا کہنا ہے یہ ہنگامی امداد زیادہ دیر جاری نہیں رہ سکتی ۔

50% LikesVS
50% Dislikes
Leave A Reply

Your email address will not be published.