حب میں کمپنیوںسے زہریلے دھویں خارج ہوتے ہیں ،رپورٹ

0 110

Get real time updates directly on you device, subscribe now.

محکمہ ماحولیات و لیبر ڈپارٹمنٹ مذکورہ فیکٹریوں کیخلاف کاروائی کرنے سے انکاری ہیں

حب؛حب میں متعدد کمپنیاں جن سے زہریلے دھویں خارج ہوتے ہیں جن کے متعلق کئی بار نشاندہی کرائی گئی لیکن محکمہ ماحولیات کے جانب سے کوئی کاروائی عمل میں نہیں لائی گئی جبکہ دوسری جانب لیبر ڈائریکٹر اپنے فرائض سرانجام دینے سے قاصر ،بعض اسٹیل ملز تمام تر بنیادی سہولیات سے محروم ہیں اسٹیل ملوں میں کمسن بچے کام کرتے ہیں اور تمام اسٹیل کمپنیوں میں مزدور حفاظتی سیفٹی نا ہونے کے برابر ہے کئی بار سیفٹی نا ہونے کی وجہ سے اسٹیل ملوں میں مزدوروں کے ساتھ حادثہ رونما ہوئے اور کئی مزدور معزور ہوچکے ہیں لیکن انکے خلاف لیبر ڈپارٹمنٹ کی جانب سے کاروائی نہ ہونا کئی سوالات جنم لے رہے ہیں

رپورٹ کے مطابق ہائیٹ کے مختلف فیکٹریاں بسکونی، کینڈی لینڈ ون اور کینڈی لینڈ ٹو ،سنیک سٹی، آسٹروپیک ون، آسٹرو پیک ٹو سمیت اسٹیل ملز میں زہریلہ دھواں خارج کیا جاتا ہے صفائی ستھرائی کا فقدان ہے لیکن محکمہ ماحولیات کا ان فیکٹریز کے خلاف کارروائی نا کرنا جس سے واضح طور پر اندازا لگایا جاسکتا ہے کہ درج ذیل فیکٹریوں کے خلاف کوئی ایکشن لینے والا نہیں مزدور اگر کمپنیوں کے خلاف کسی ادارے میں رپورٹ درج کرتے ہیں تو انہیں فارغ کیا جاتا جوکہ کمپنی میں بھرتی ہوتے وقت مزدور کو باقاعدہ ہدایت کی جاتی ہے البتہ محکمہ ماحولیات کو چاہیے کہ وہ میڈیا ٹیم کے ساتھ تمام کمپنیوں میں دورہ کرے تاکہ دودھ کا دودھ اور پانی کا پانی ہوجائے ،درج ذیل کمپنیوں سمیت متعدد دیگر کمپنیاں جہاں مزدور حفاظی تدابیر سے محرو، ناقص کھانے فرائم کئے جارہے ہیں اور زہریلے دھویں کے باعث ماحول آلودہ ہورہا ہے اور سرے عام محکمہ ماحولیات کے قوانین کی خلاف ورزی کرہے ہیں مگر سوال ہی پیدا نہیں ہوتا کہ محکمہ ماحولیات اور لیبر ڈپارٹمنٹ ان کمپنیوں کے خلاف کاروائی عمل میں لائے، آخر کچھ تو ہے جسکے باعث متعلقہ اداروں کے افسران درج ذیل کمپنیوں کے خلاف کاروائی کرنے سے انکاری ہیں اب سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ محکمہ ماحولیات انکے فیکٹریوں کے خلاف سخت ردعمل دکھائی گی یا معاملہ جوں کا جوں رہے گا۔

50% LikesVS
50% Dislikes
Leave A Reply

Your email address will not be published.